کراچی،لینڈ آرکائیونگ کاکام جاری،اب ایک پلاٹ کی دودو فائلیں نہیںن سکیں گی

کراچی میں لینڈ آرکائیونگ کاکام جاری ہے جس سے ب ایک پلاٹ کی دودو فائلیں نہیںبن سکیں گی ۔میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی میں لینڈ ڈپارٹمنٹ کی محفوظ شدہ دستاویزات کو کمپیوٹرائزڈ کیا جارہا ہے تاکہ لینڈ اور پراپرٹی کے کاغذات میں کسی قسم کا رد و بدل ممکن نہ ہوسکے، اس کا مقصد محکمہ لینڈ کے اہم ریکارڈ کو ڈیجیٹل شکل دے کر ضائع ہونے اور غلط استعمال سے بچانا ہے،اسی طرح محکمہ فنانس میں مالی نظم و ضبط کو مربوط کرنے اور جدید خطوط پر استوار کرنے کے لیے فنانشل مینجمنٹ کا سافٹ ویئر تیار کیا جا رہا ہے اور اس پر تمام اخراجات کے ایم سی از خود کررہی ہے۔مئیر کراچی نے محکمہ فنانس اور محکمہ لینڈ کے افسران سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ لینڈ آرکائیونگ کا کام گزشتہ سال شروع کیا گیا تھا جو رواں مالی سال بھی جاری رہے گا تاکہ جلد سے جلد اس اہم نوعیت کے کام کو مکمل کیا جاسکے۔انہوں  نے کہا کہ کراچی نے کہا کہ شہری اکثر یہ شکایت کرتے نظر آتے تھے کہ ان کی جائیداد کے کاغذات میں تبدیلی کر دی گئی ہے یا وہ غیر محفوظ ہیں اور مینوئل طریقے سے ایک ایک پلاٹ کی دو دو فائلیں بھی بنادی گئی ہیں۔ ان شکایات کا فوری نوٹس لیتے ہوئے یہ فیصلہ کیا گیا کہ تمام دستاویزات کو کمپیوٹرائزڈ کر دیا جائے اور ایسا نظام ہو کہ کسی بھی پلاٹ یا عمارت کے کاغذات کو صرف ایک کلک کے ذریعے دیکھا جاسکے جس میں غیر متعلقہ افسران یا محکمے کے ملازمین کسی بھی قسم کا رد و بدل نہیں کرسکتے۔ میئر کراچی نے مزید کہا کہ اب کمپیوٹرائزڈ دستاویزات کا زمانہ ہے اور دفاتر میں کاغذات کی مینوئل طریقے سے تیاری تقریباً ختم ہوچکی ہے، محکمہ اسٹیٹ کی جانب سے جو چالان جاری کیے جا رہے ہیں انہیں بھی مکمل کمپیوٹرائزڈ کر دیا گیا ہے ۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں